google badge ios badge google badge

Search posts by:

Newsletter successfully sent
Failed to send newletter

AlwaysFree: چین کا اومکرون پھیلنا عالمی سپلائی چینز کے ذریعے ہلچل مچا دیتا ہے۔

Author: SSESSMENTS

دنیا کے سپلائی چین نیٹ ورکس چین میں اومکرون کے پھیلنے سے پیدا ہونے والے اضافی جھٹکوں کے لیے تیار ہیں۔ 2020 اور 2021 میں چین کے وائرس پر قابو پانے کے سخت اقدامات کے تحت فیکٹریاں کھلی رہ سکتی ہیں۔ تاہم، دنیا کی دوسری سب سے بڑی معیشت متعدی Omicron تناؤ کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے اس سے بھی زیادہ سخت پابندیاں عائد کرنے کا امکان ہے، جس سے بندرگاہوں اور کارخانوں میں خلل پڑنے کی توقع ہے۔ تجزیہ کاروں نے خبردار کیا کہ چین میں شدید مینوفیکچرنگ یا لاجسٹک شٹ ڈاؤن کے عالمی اقتصادی ماحول پر بڑے پیمانے پر اثرات مرتب ہوں گے۔

دنیا کی مصروف ترین کنٹینر بندرگاہوں میں سے ایک ننگبو کے آس پاس کپڑوں کے کارخانے اور گیس کی ترسیل بند ہیں، ڈیلٹا اور اومیکرون دونوں تناؤ کے پھیلنے کی وجہ سے۔ لاک ڈاؤن شہر ژیان میں کمپیوٹر چپ بنانے والی سائٹیں بھی بند ہیں۔ شانسی صوبے میں اینیانگ نے منگل کے روز شہر بھر میں لاک ڈاؤن شروع کیا، جب کہ تیانجن، جو کہ کارگو تھرو پٹ کے لحاظ سے دنیا کی نویں سب سے بڑی بندرگاہ ہے، نے دو شہروں کو بند کرنا شروع کر دیا۔ چین کے اہم ٹیکنالوجی مرکز، شینزین میں حکام نے منگل کے روز شہر میں داخل ہونے والی گاڑیوں پر پابندیاں سخت کر دیں، جس سے قریبی یانٹیان بندرگاہ پر تاخیر کے خدشات پیدا ہوئے۔

چین کی سخت پابندیاں اس وقت لگتی ہیں جب عالمی سپلائی چین نیٹ ورک پہلے ہی ٹرکوں، کنٹینر بکسوں اور جہازوں کی قلت سے دوچار ہیں۔ فریڈرک نیومن، ایک ماہر اقتصادیات HSBC ہولڈنگز پی ایل سی نے متنبہ کیا کہ اگر چین اور باقی ایشیا وائرس پر قابو پانے میں کامیاب نہیں ہوتے ہیں، تو یہ "تمام سپلائی چین کی ٹھوکروں کی ماں" کو متحرک کر دے گا۔

Tags: All Products,AlwaysFree,Asia Pacific,China,NEA,Urdu

Published on January 13, 2022 12:14 PM (GMT+8)
Last Updated on January 13, 2022 12:14 PM (GMT+8)